سیکٹورلفنانس
تازہ ترین

وزیر اعظم عمران خان کی نئے پاکستان کے سفرمیں قوم سے ساتھ نبھانے کی اپیل

یہ ملک بچے گا یا یہ کرپٹ لوگوں رہیں گے: وزیر اعظم عمران خان کا پہلا اور فی البدیع خطاب

کراچی: ملک کے22 ویں وزیر اعظم عمران خان نیازی نے پہلے فی البدیع خطاب میں قوم کو جھنجوڑ کر کرپٹ عناصر اور ماضی کی بے قاعدگیوں پر روشنی ڈالنے کے ساتھ ساتھ انتخابات سے قبل اپنے منشور میں کئے گئے وعدوں پر عمل کرنے کی یقین دہانی کرادی ہے۔

وزیر اعظم کی تقریر میں بے ساختہ پن اور قوم کے لئے درد کا واضع طور پر اندازہ اس امر سے لگایا جاسکتا ہے کہ انہوں نے قوم سے خطاب کے دوران کہا کہ ” یہ ملک بچے گا یا یہ کرپٹ لوگوں رہیں گے”

وزیراعظم عمران خان کے قوم سے پہلے خطاب کے نکات

صرف دو گاڑیاں اور 2 ملازم رکھوں گا۔

تبدیلی آئی نہیں آ گئی ہے

لوٹا ہوا پیسہ واپس پاکستان لائیں گے

وزیراعظم ہاوس کوریسرچ یونیورسٹی بنائیں گے

وزیراعظم کے لئے بلٹ پروف گاڑیوں کو نیلام کریں گے

گورنر ہاوس میں نہیں رہے گا، انہیں عوام کے لئے کھولیں گے

نیلام شدہ گاڑیوں کا پیسہ ملکی خزانہ میں جائے گا

نیب کو طاقتور بنائیں گے

کرپشن کو ملک سے ختم کریں گے

یا یہ ملک بچے گا یا یہ کرپٹ لوگوں رہیں گے

کرپشن کی نشاندہی کرنے والے کو انعام سے نوازہ جائے گا

اداروں سے کرپٹ لوگوں کا خاتمہ کروں گا

کسی بھی مقدمے کی سماعت ایک سال سے زیادہ نہیں ہو گی

پولیس کا نظام ٹھیک کروں گا

بیرون ملک قید پاکستانیوں کی مدد کی جائے گی

کرپشن ختم کرنے کے لئے سختی سے کام لیں گے

نیب کو جانبدار بنائیں گے

گورنمنٹ اسکولوں کو بہتر بنائیں گے

پرائیویٹ اسکولوں کے لوگوں کو گورنمنٹ اسکولوں کی حالت کو ٹھیک کرنے کا کہے گے

مدرسہ میں پڑھنے والے بچوں کا مستقبل روشن ہو گا انہیں بھی میرٹ پر لے کر چلیں گے۔

بچوں سے زیادتی کے واقعات کے خلاف سخت ایکشن لیا جائے گا

اسپتالوں کا نظام بہتر کریں گے

پورے پاکستان میں ہیلتھ کارڈ متعارف کروائیں گے۔

سندھ کے اسکولوں کو سندھ گورنمنٹ کے ساتھ مل کر مسائل حل کریں گے۔

سب سے بڑا مسئلہ پانی کا ہے اسے ترجیہی بنیادوں پر حل کریں گے۔

ڈیم کو بنائیں گے۔

بھاشا ڈیم کو بنانے کے لئے ملک بھر سے اور بیرون ملک پاکستانی ساتھ دیں۔

کسانوں کے لئے پانی کی فراہمی بہتر بنائیں گے۔

کسانوں کے لئے ریسرچ بہت ضروری ہے کہ پانی کا سہی استعمال کیسے کیا جائے گا۔

ٹاسک فورس بنائی جائے گی تاکہ بیرون ملک سے پیسہ واپس ملک میں لایا جائے۔

ہم سول سروسز کا بنیادی ڈھانچہ از سر نو ترتیب دیں گے اور مل کر کام کریں گے۔

عام آدمی کو عزت دیں گے۔ جو اس کا حق ہے وہ اسے دلوائیں گے۔

عام آدمی سرکاری دفتر آئے تو اس کو عزت ملے گی۔

بلدیاتی نظام میں بہتری لائیں گے۔

ناظم کا انتخاب براہ راست کریں گے۔

بچوں کے لئے پارک بنائیں گے۔

ملک بھر میں درخت لگا کر اسے ہرا بھرا کریں گے

صفائی نصف ایمان ہے، گندگی کو صاف کریں گے

نوجوانوں کو بلا سود قرضے دیں گے

پچاس لاکھ سستے گھر بنائیں گے

پاکستان دنیا کا خوبصورت ملک ہے، بڑے سیاحتی مقام کھولیں گے۔

بلوچستان کے بنیادی مسائل حل کریں گے۔

پنجاب میں لاہور کے علاوہ بھی تمام شہروں کے مسائل حل کریں گے۔

کراچی کے لوگوں کے لئے پانی کا مسلہ حل کریں گے

نیشنل ایکشن پلان پر بھرپور کام کریں گے

ملک سے دہشت گردی کا خاتمہ کریں گے

پاکستان کو امن کی ضرورت ہے۔

انشاءاللہ پاکستان کو ایک فلاحی ریاست بنائیں گے

اسٹریٹ چلڈرن، بیوہ عورتوں، معزور افراد کی ذمہ داری ہم نے لینی ہے۔

میں چاہتا ہوں ہم اپنے اندر رحم پیدا کریں ۔

کراچی میں ٹرانسپورٹ کا مسئلہ حل کریں گے۔

مدینہ کی طرز پر ریاست بنائیں گے

میں قوم سے سادگی اپنانے کی اپیل کرتا ہوں

ایک ایک پیسہ بچا کر دکھاوں گا، قوم کا پیسہ ہے ہماری ذمہ داری ہے میں قوم کے پیسے کی حفاظت کر کے دکھاوں گا

پاکستان اللہ کی نعمت ہے۔

پاکستان میں ایک دن ایسا آئے گا کہ کوئی زکات لینے والا نظر نہیں آئے گا۔ یہ میرا ویژن ہے

ملک بھر کے بیس کروڑ ستر لاکھ عوام نے وزیر اعظم عمران خان نیازی کی تقریر لفظ بہ لفظ سنی ہے۔ ایک شخص نے عام آدمی کی طرز زندگی میں مثبت تبدیلی لانے کا بیڑہ اٹھایا ہے۔ کیا ماضی میں اقتدار میں آنے والے افراد نے اپنے محلوں اور آسائشوں سے قطعہ نظر پسماندہ طبقات کی زندگیوں میں تبدیلی کی نوید سنائی؟؟؟

عمران خان نے جو ویژن دیا ہے وہ سودن یا پانچ سال کا نہیں بلکہ مملکت خداداد پاکستان اور آنے والی نسلوں کے لئے نئے سفر اور خوبصورت منزل کے لئے حقیقی جدوجہد کے آغاز کا عندیہ ہے۔ چیونٹی بھی کئی گنا بوجھ کے ساتھ بلا آخر اپنی منزل کو پالیتی ہے۔

دو ہزار سات میں تن ڈاکٹر مہاتیر بن محمد سے انٹرویو کے دوران یادگاری جملے آج پھر کانوں میں سرگوشیاں کررہے ہیں۔

مہاتیر بن محمد! ” پاکستانی قوم کو دیکھ کر رشک ہوتا ہے، اس قوم نے ہر مشکل وقت میں ثابت قدمی کا مظاہرہ کیا۔ اس ملک ( پاکستان) میں رہنے والا ہر فرد دیگر ممالک کے مقابلے میں اوسط سے زیادہ حاضر دماغ ہے۔ پاکستانی قوم کو سچے اورحقیقی حکمراں کی ضرورت ہے”

ملکی تاریخ میں بحثیت وزیر اعظم عمران خان کی یادگار تقریرسے حزب اختلاف کو بھی سانپ سونگھ گیا

ٹیگس

Zubair Yaqoob

The author has diversified experience in business reporting. He is senior editor at www.pkrevenue.com. He can be reached at [email protected]

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

error: Alert: Content is protected !!
Close