فنانس

اسٹیٹ بینک میں 71 ویں جشن آزادی کے موقع پر پرچم کشائی

اسٹیٹ بینک ملک کے اقتصادی استحکام کے لیے اپنا کردار ادا کرتا رہے گا، گورنر باجوہ کا عزم

کراچی: اسٹیٹ بینک آف پاکستان کے تحت آزادی کی 71 ویں سالگرہ پروقار انداز میں منائی گئی۔ گورنر اسٹیٹ بینک آف پاکستان طارق باجوہ نے بینک کے احاطے میں پودا لگا کر سرگرمیوں کا باقاعدہ آغاز کیا۔ گورنر اسٹیٹ بینک طارق باجوہ نے قومی ترانے کی گونج کے ساتھ  پرچم لہرایا۔

یوم آزادی کی تقریب سے خطاب کرتے ہوئے گورنر اسٹیٹ بینک نے قیام پاکستان قیام کے لیے برصغیر کے مسلمانوں نے قائد اعظم محمد علی جناح کی بے لوث اور جرات مند قیادت میں بیش بہا قربانیوں پر روشنی ڈالی۔

طارق باجوہ نے باجوہ نے  نومنتخب اراکین قومی اسمبلی کی حلف برداری سے جمہوری عمل کے تسلسل کو ملک کے لیے نیک شگون قرار دیا۔ انہوں نے اس یقین کا اظہار کیا کہ معاشی حالات میں بہتری کا سفر جاری رہے گا اور اپنے دائرہ اختیار میں اسٹیٹ بینک نومنتخب حکومت کے ساتھ مکمل تعاون کرتا رہے گا۔

گورنراسٹیٹ بینک نے اس امر پر اطمینان ظاہر کیا کہ پاکستان نے اپنے قیام کے فوراً بعد معاشی ترقی سمیت کئی محاذوں پر کامیابی حاصل کی۔ انہوں نے کہا کہ ملک کے معاشی نظام کے نگراں کی حیثیت سے اسٹیٹ بینک آف پاکستان اپنی ذمہ داریاں ادا کر رہا ہے۔ تاہم انہوں نے تسلیم کیا کہ اقتصادی محاذ پر بہت سی دشواریوں کا سامنا کرنا پڑا۔

طارق باجوہ نے ملک میں اقتصادی حالات بہتر بنانے کے لیے اسٹیٹ بینک کے طویل مدتی اقدامات کا مختصر ذکر کیا جن میں مانیٹری پالیسی فریم ورک میں بہتری لانا اور قیمتوں کا استحکام یقینی بنانا شامل ہیں۔ انہوں نے کہا کہ یہی استحکام معاشی نمو کا ضامن ہے جس کے نتیجے میں عوام کا معیارِ زندگی بہتر ہوتا ہے اور بچت کی رقوم اپنی قدر سمیت محفوظ رہتی ہیں۔

طارق باجوہ نے کہا کہ نجی شعبے کو دیے گئے قرضوں میں عمدہ نمو کی بنا پر شعبہ بینکاری کے اثاثوں میں زبردست اضافہ ہوا ہے، تاہم انہوں نے معیشت کی تمام سطحوں بالخصوص ایس ایم ایز، زراعت اور معاشرے کے مالی طور پر پسماندہ طبقات کے لیے بینکاری مصنوعات لانے کی ضرورت پر زور دیا۔

انہوں نے کہا کہ ایس ایم ایز اپنے نمایاں رول کی بنا پر کسی بھی معیشت کے لیے ترجیحی حیثیت رکھتے ہیں تاہم انہیں بڑی حد تک نظرانداز کیا گیا ہے۔ اسٹیٹ بینک نے ایس ایم ای قرضوں کے فروغ کے لیے حال ہی میں پالیسی متعارف کرائی ہے چنانچہ امید ہے کہ ایس ایم ایز کو بینکوں کی طرف سے قرضوں میں اضافہ ہوگا۔

گورنر اسٹیٹ بینک نے کہا کہ زری  استحکام اور اقتصادی ترقی کے لیے مالی شمولیت اہم ہے اور اس مقصد کے لیے 2015ء میں مالی شمولیت کی قومی حکمتِ عملی کا آغاز کیا گیا تھا تاکہ 2020ء تک ملک کی بالغ آبادی کی نصف تعداد کو اکاؤنٹ کی سہولت میسر ہو۔

اسٹیٹ بینک کے گورنر طارق باجوہ نے کہا کہ دیگر ترقی پذیر ملکوں کی طرح پاکستان کو بھی مکانات کی قلت کا سامنا ہے، تخمینے کے مطابق ہمارے ملک میں ایک کروڑمکانات کی کمی ہے۔ اس کمی کا ایک بڑا سبب قرضوں کی عدم دستیابی ہے۔ اس مسئلے پر قابو پانے کے لیے اسٹیٹ بینک نے متعلقہ فریقوں کی مشاورت سے پاکستان میں سستے مکانات کے لیے قرضے جاری کرنے کی ایک پالیسی بنائی ہے۔ انہوں نے امید ظاہر کی کہ مالی ادارے اپنے وسائل کا رُخ اس اہم شعبے کی طرف کریں گے۔

گورنر نے اسٹیٹ بینک میوزیم میں جیل کے قیدیوں کی بنائی ہوئی تصویروں کی خصوصی نمائش کا افتتاح کیا۔ کراچی سینٹرل جیل کے 25 قیدیوں نے ان فن پاروں میں یومِ آزادی پر اپنے احساسات کی تصویر کشی کی ہے۔

لاہور، اسلام آباد، کوئٹہ اور پشاور میں واقع ایس بی پی بی ایس سی کے فیلڈ دفاتر میں بھی یوم آزادی کی تقاریب کا اہتمام کیا گیا۔ اسٹیٹ بینک کے پنشنرز کو اس موقع پر خصوصی طور پر مدعو کیا گیا تھا جس کا مقصد ادارے کی حیثیت سے اسٹیٹ بینک کی ترقی میں ان کے کردار کو خراجِ تحسین پیش کرنا تھا۔

عام شرکا کے لیے ان تقریبات میں اسٹیٹ بینک کی تاریخ پر روشنی ڈالنے کی خاطر ایک نمائش کا انعقاد کیا گیا ، جس میں مختلف تصاویر اور وڈیوز دکھائی گئیں۔  پاکستان سیکورٹی پرنٹنگ پریس کارپوریشن نے کرنسی کی طباعت  کی نمائش کی۔ اے ٹی ایم مشین کے ہمراہ ایک اسٹال پر اے ٹی ایم  کے امور کے ساتھ یہ بھی بتایا گیا کہ اے ٹی ایم فراڈ سے کس طرح بچا جاسکتا ہے۔ خریداری کے لیے یادگاری سکے ،  پرائز بانڈز اور ڈاک ٹکٹ بھی دستیاب تھے۔ ڈجیٹل بینکاری ذرائع کے فروغ کی خاطر متعدد کمرشل بینکوں نے اپنے اسٹال لگائے جہاں پر انہوں نے ڈجیٹل بینکاری کے اطلاق کا مظاہرہ کیا۔

ٹیگس

Zubair Yaqoob

The author has diversified experience in business reporting. He is senior editor at www.pkrevenue.com. He can be reached at [email protected]

متعلقہ خبریں

جواب دیں

آپ کا ای میل ایڈریس شائع نہیں کیا جائے گا۔ ضروری خانوں کو * سے نشان زد کیا گیا ہے

error: Alert: Content is protected !!
Close